ادرک کی چائے بنانے کا طریقہ – ادرک کی چائے کے فوائد

ادرک کی چائے بنانے کا طریقہ

ادرک سے بنی چائے نہ صرف مختلف امراض کے خاتمے میں مدد دیتی ہے بلکہ یہ وٹامن سی سے بھرپور ہونے کی وجہ سے صحت کے لئے بھی انتہائی مفید ہوتی ہے۔ ادرک کی چائے ذہنی دباؤ کم کر کے موڈ پر خوشگوار اثرات مرتب کرتی ہے۔

ادرک کی چائے کے فوائد

ادرک کی چائے کے لاتعداد فوائد ہیں جن میں سے چند کے درج ذیل ہیں۔

  1. ادرک کی چائے قوت مدافعت کو بڑھاتی ہےجس کی وجہ سے انسان بیماریوں سے محفوظ رہتا ہے۔ چائے کے استعمال سے نہ صرف جسم کو آسودگی ملتی ہے بلکہ انسانی دماغ کو سخت ٹینشن میں سکون ملتا ہے۔
  2. ادرک کی چائے سے معدے کی تیزابیت اور سینے کی جلن ، پیٹ میں درد اور سانس کی بیماری سے نجات ملتی ہے۔
  3. ادرک کی چائے الٹی اور قے سے نجات دلاتی ہے۔ اگر آپ کو سفر کے دوران الٹی ہوتی ہے تو سفر سے پہلے ادرک کا قہوہ یا چائے پی لیں، آپ کو قے، متلی اور الٹی کی شکایت نہ ہو گی۔ اس کے علاوہ اگر آپ کو الٹی کی شکایت ہو تو دن میں دو سے تین بار اس چائے کے استعمال سے الٹی بالکل رک جاتی ہے۔
  4. بچوں میں الٹی (قے) روکنی ہو تو اس کے لیے بھی ادرک کا استعمال بہت مفید ثابت ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ پیٹ کے کیڑوں کو مارنے میں بھی اِکسیر ہے۔یونیورسٹی آف نیپلز کے ماہرین نے کہا ہے کہ ادرک کے رس کے چند قطرے پلانے سے بچوں کے پیٹ میں انفیکشن کم کیا جاسکتا ہے اور اس سے پیٹ میں درد اور قے سے نجات ملتی ہے۔
  5. ادرک کی چائے پینے سے انسان کے پٹھے مظبوط ہوتے ہیں۔ اور یہ جوڑوں کی سوجن کو بھی ختم کر دیتی ہے۔
  6. ادرک سے بنی چائے نظام ہاضمہ اور غذا کو جذب کرنے کی صلاحیت کو بڑھاتی ہے اور بالخصوص بہت زیادہ کھانے کے بعد اس چائے کو پینے سے پیٹ میں گیس کے باعث پیدا ہونے والے ابھار یا سوزش کو ختم کرتی ہے۔
  7. خواتین کو کچھ مخصوص ایام میں کافی دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے لہذا اگر وہ ایک کپ ادرک والی چائے پئیں تو انہیں کافی سکون ملے گا۔
  8. ادرک کی چائے بہت گرم ہوتی ہے اور اس چائے کا استعمال سردیوں میں سردی سے نجات کے لیے بھی کیا جاتا ہے۔
  9. ادرک میں موجود وٹامنز، معدنیات اورامائنو ایسڈ جسم میں دوران خون کو بہتر بنا کر دل کی بیماریوں کے خطرے کو کم کر دیتا ہے جب کہ ادرک کی چائے آنتوں میں پیدا ہونے والی چکنائی کو بننے سے روکتی ہے جس سے دل کے دورے اور اسٹروک سے محفوظ رہا جا سکتا ہے۔
  10. یہ چائے مائیگرین (درد شقیقہ) میں آرام دینے کے ساتھ ساتھ ذہنی سکون کا سبب بھی بنتی ہے۔
  11. جسم میں زہریلے کودے کے رکنے سے جسم میں سوجن ہونا شروع ہو جاتی ہے لیکن اگر آپ ادرک والی چائے کا استعمال شروع کردیں تو اس سے نجات مل جائے گی۔ اس طرح آپ جوڑوں کے درد سے محفوظ رہیں گے جبکہ آپ کے پٹھے بھی مضبوط ہو جائیں گے۔
  12. ادرک میں پایا جانے والا ایک کیمیکل جنجرول ہے جو ادرک کو ترش ذائقہ دیتا ہے۔ یہ کیمیکل منہ میں جاکر ایک خاص اینزائم کو ختم کرتا ہے۔ ادرک کی چائے پینے سے سانس اور منہ کی بدبو کا خاتمہ ہوتا ہے۔
  13. بعض لوگ ٹھنڈے یا نیم گرم پانی سے نہانے کے بعد جسم میں کپکپی یا درد محسوس کرتے ہیں۔ اگر وہ نہانے کے بعد ادرک کی چائے پی لیں تو انہیں اس سردی سے نجات مل جائے گی۔
  14. ادرک کی چائے میں ایسے اجزاء پائے جاتے ہیں جن سے جسم کو آسودگی ملتی ہے اور انسان ذہنی تناؤ سے بچ جاتا ہے۔
  15. ایسے افراد جن کو بھوک بہت کم لگتی ہے یا بالکل نہیں لگتی ، ان کے لیے بھی یہ چائے کسی نعمت سے کم نہیں۔
  16. کھانے کے بعد ادرک کی چائے استعمال کرنے سے ہاضمہ ٹھیک ہو جاتا ہے۔ اور خوراک جلدی ہضم ہوتی ہے۔
  17. مخصوص ایام میں خواتین کو کافی دشواری کا سامنا کرنا پڑتا ہے لہذا اگر وہ ایک کپ ادرک والی چائے میں شہد ملا کر پئیں تو کافی سکون ملے گا ۔اس کے ساتھ ادرک والے گرم قہوہ میں کپڑا گیلا کر کے پیٹ کے نیچے لگانے سے درد سے بھی نجات ملے گی۔
  18. ادرک قدرتی طور پر اینٹی آکسیڈنٹس سے لبریز ہوتی ہے جو بخار اور درد کو کم کرتی ہے۔ بخار میں ادرک کی چائے بہت فائدہ مند ہوتی ہے۔

ادرک کی چائے بنانے کا طریقہ

ایک برتن میں دو کپ تازہ پانی ڈالیں اور اسے چولہے پر رکھ دیں۔ جب پانی ابلنا شروع ہو جائے تواس میں ادرک ڈال کر مزید دس منٹ تک جوش دینے کے بعد اتار لیں۔

چولہے سے اتارنے کے بعد چائے کو تھوڑا ٹھنڈا ہونے دیں، یعنی جب چائے نیم گرم ہو جائے تو اس میں دو چائے کے چمچ شہد اور ایک چائے کا چمچ لیموں کا رس مکس کر دیں۔ آپ کی چائے تیار ہے۔

یہ بھی پڑھیے: ادرک کے حیرت انگیز فوائد، ادرک کے ذریعے علاج کے طریقے

یاد رکھیں۔ ادرک کے قہوے اور چائے کی تاثیر بہت گرم ہوتی ہے۔ اس لیے چائے میں ادرک کی مناسب مقدار ڈالیں۔ آپ چائے میں جتنی زیادہ ادرک ڈالیں گے ، چائے کی تاثیر اتنی ہی گرم ہو گی۔ اس لیے یہ چائے پانچ سال سے کم عمر بچوں اور مریضوں کو نہیں دینی چاہیے۔

نوٹ: ادرک کی چائے سے متعلقہ یہ تحریر محض معلومات عامہ کے لئے شائع کی جا رہی ہے۔ یاد رکھیں ہر ٹوٹکہ ہر انسان کےلئے نہیں ہوتا۔ اِس لئے اپنے تئیں کوئی نسخہ مت آزمائیں، بلکہ اپنے معالج (ڈاکٹر، طبیب) سے مشورہ کر کے اس کی ہدایت کے مطابق عمل کریں، شکریہ

یہاں سے شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے