شادی کرنے کے فوائد – شادی کے فوائد مرد اور عورت کے لئے

شادی کرنے کے فوائد، شادی کے فوائد مرد اور عورت کے لئے۔ شادی شدہ زندگی کے فوائد

شادی کرنے کے فوائد

شادی کرنے کے بہت سے فوائد ہیں، شادی کرنے کے بعد انسان کی زندگی تبدیل ہو جاتی ہیں،  انسان بے کار اور بے مقصد زندگی گزارنے کے بجائے خوشیوں اور شادمانیوں سے بھرپور بامعنی زندگی بسر کرنے لگتا ہے۔ شادی شدہ افراد کو زیادہ بہتر سماجی معاونت حاصل ہوتی ہے۔

اس تحریر میں ہم بات کریں گے کہ شادی کے فوائد کیا ہیں؟ شادی کرنے سے مرد اور عورت کو کیا فائدہ ہوتا ہے۔ انسانی زندگی پر شادی کے کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ شادی کے بعد کی زندگی کیسی ہوتی ہے؟

شادی کرنے کے درج ذیل فوائد ہیں:

1. احساس ذمہ داری

شادی کرنے سے انسان میں احساس ذمہ داری پیدا ہو جاتا ہے۔ کیونکہ شادی کی وجہ سے ذمہ داریوں میں اضافہ ہوجاتا ہے اس لیے انسان یکسوئی کے ساتھ محنت کرتا ہے اور اپنے مقصد کو حاصل کرنے کے لئے دن رات ایک کردیتا ہے کیونکہ اسے علم ہوتا ہے کہ ہراسے ہر صورت میں اپنے گھر کو چلانا ہے اور وہ اپنے کیریئر کی طرف بہتر طریقے سے توجہ دے پاتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کامیابی کا راز محنت میں پوشیدہ ہے

شادی کسب معاش کے لیے جدوجہدکرنے پر اکساتی ہے اور بےروزگاری اور بے عملی کو ترک کرنے پر آمادہ کرتی ہے۔ جس سے انسان میں احساس ذمہ داری پیدا ہو جاتی ہے۔

2. سکون کی نیند سونا

شادی کرنے کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ شادی کرنے کے بعد انسان سکون کی نیند سوتا ہے، وہ لوگ جن کے تعلقات اپنی شریک حیات سے خوشگوار ہوتے ہیں وہ زیادہ پر سکون نیند سوتے ہیں ۔ جبکہ ان لوگوں کے مقابلے میں ایسے افراد جن کے تعلقات اپنی شریک حیات سے اچھے نہ ہوں یا جو کنوارے ہوتے ہیں انہیں پرسکون نیند بامشکل نصیب ہوتی ہے۔

پٹسبرگ یونیورسٹی کی ایک تحقیق کے مطابق اگر شادی کے بعد تعلق خوش باش ہو تو لوگوں کی نیند کا معیار بہتر ہو جاتا ہے تاہم ناخوش جوڑوں میں یہ نیند متاثر ہونے کا خدشہ ہوتا ہے اور اگر نیند پوری نہ ہو تو موٹاپے سمیت چڑچڑے پن اور دیگر امراض کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

3. عمر میں اضافہ

شادی کرنے سے انسان کی طبعی عمر میں دس فیصد اضافہ ہو جاتا ہے۔ جس کی بنیادی وجہ شادی کے بعد افراد کا قوت مدافعت متحرک ہو جاتا ہے جس کے باعث کینسر جیسے امراض لاحق ہونے کے امکانات میں دس فیصد کمی آجاتی ہے ۔یہی وجہ ہے کہ دنیا میں زیادہ تر خودکشی کنوارے لوگ ہی کرتے ہیں۔

ایک تحقیق کے مطابق شادی کے بعد عمر میں کئی برس تک کا اضافہ ہو جاتا ہے جبکہ اس کے مقابلے میں غیرشادی شدہ افراد میں جلد موت کا خطرہ دوگنا زیادہ ہوتا ہے۔ شکاگو یونیورسٹی کی ایک تحقیق کے مطابق شادی کے بندھن میں بندھ جانا لوگوں کے اندر ذہنی تناؤ یا مایوسی کے خطرے کو نمایاں حد تک کم کردیتا ہے۔

ڈیوک یونیورسٹی کی ایک تحقیق کے دوران پانچ ہزار افراد کا جائزہ لیا گیا تو معلوم ہوا کہ لوگوں کی اڈھیر عمری میں شادی شدہ ہونا یا نہ ہونا صحت کو لاحق خطرات پر اثرانداز ہوتا ہے۔ محققین کے مطابق غیرشادی شدہ افراد میں جلد موت کا خطرہ دوگنا زیادہ ہوتا ہے۔

4. تحفظ کا احساس

شادی کے بعد میاں اور بیوی کو احساس ہو جاتا ہے کہ ان کی بقا اور تحفظ ایک دوسرے کے ساتھ رہنے میں ہے۔ اس لیے دونوں کی کوشش ہوتی ہے کہ کوئی ایسا کام نہ کیا جائے جس سے ان دونوں میں سے کسی ایک کو نقصان پہنچے، جیسےشادی کے بعد زیادہ تر لوگ نشہ چھوڑ دیتے ہیں، گاڑی تیز نہیں چلاتے، خطرناک سرگرمیوں میں حصہ نہیں لیتے۔ وغیرہ وغیرہ۔

اوہائیو اسٹیٹ یونیورسٹی کی ایک تحقیق کے مطابق جب لوگوں کی شادی ہوجاتی ہے تو ان کے اندر خطرناک اقدامات کے رجحان میں نمایاں کمی آتی ہے اور اس کی وجہ ممکنہ طور پر ان لوگوں کا احساس ہوتا ہے جو ان پر منحصر ہوتے ہیں (بیوی، شوہر اور بچے) اور اس وجہ سے وہ اپنے تحفظ کا خاص خیال رکھتے ہیں۔

5. غیر اخلاقی عادات، بےراہ روی اور ناجائز جسمانی تعلقات سے نجات

شادی کرنے کے بعد کئی ایسی جسمانی و معاشرتی بیماریوں سے بھی نجات مل جاتی ہے۔ جن کے پھیلنے کی وجہ غیر اخلاقی عادات ،بے راہ روی اور نا جائز جسمانی تعلقات ہوتے ہیں ۔یہ ساری لتیں ایک فرد کو اس وقت لگتی ہیں جب وہ خود کو تنہا محسوس کرتا ہے ۔شادی کے بعدیہ تمام چیزیں خود بخود ختم ہو جاتی ہیں۔ جس کی وجہ سے ایڈز کی بیماری نہیں پھیلتی اور معاشرہ ایڈز جیسے مرض سے پاک ہو جاتا ہے۔

6. ذہنی سکون کا حصول

دنیا میں کئی تحقیقات یہ بات ثابت کر چکی ہیں کہ شادی شدہ نوجوان افراد ،کنوارے افراد کے مقابلے میں پر سکون زندگی گزارتے ہیں ،اگر چہ کنوارے افراد چند لمحوں کے لئے تفریح ،لطف اور موج مستی تو کر سکتے ہیں لیکن جوحقیقی ذہنی سکون اور اطمینان قلب شادی کے بعد ہی میسر آتا ہے ، اس کو لفظوں میں کہاں بیان کیا جا سکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہمارے دین اسلام میں شادی کو بہت اعلیٰ مقام دیا گیا ہے۔

7۔ ہارٹ اٹیک سے بچاؤ

شادی کرنا مرد اور خواتین دونوں میں ہارٹ اٹیک کا خطرہ کم کردیتا ہے۔ یہ دعویٰ فن لینڈ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔ تحقیق کے مطابق شادی شدہ خواتین میں ہارٹ اٹیک کا خطرہ 65 فیصد تک جبکہ مردوں میں 66 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

فن لینڈ کی ٹیورکو یونیورسٹی کی اس تحقیق میں مزید بتایا گیا کہ شادی سے ہر عمر کے مرد اور خواتین میں خون کی شریانوں کے مسائل سے موت کا خطرہ کم ہوتا ہے اور اس کی وجہ شادی شدہ افراد کی صحت مند زندگی گزارانا، زیادہ دوست اور سوشل سپورٹ حاصل ہونا ہوتا ہے۔

8. فالج سے بچاؤ

جریدے امریکن اسٹروک ایسوسی ایشن میں شائع ایک تحقیق کے مطابق شادی شدہ مردوں میں جان لیوا فالج کے دورے کا خطرہ تنہا مرد کے مقابلے میں 63 فیصد تک کم ہوتا ہے۔ تحقیق کے دوران یہ بات بھی سامنے آئی کہ شریک حیات سے اچھا تعلق فالج سے بچاﺅ کے امکانات پر اثرانداز ہوتا ہے۔

اگر آپ شادی سے ناخوش ہیں تو فالج کے خطرے میں کوئی خاص کمی نہیں آتی۔ محققین کے مطابق غیرشادی شدہ افراد کے مقابلے میں شادی شدہ افراد کو فالج کی صورت میں فوری طبی امداد میسر آجانا اس کی وجہ ہو، کیونکہ فالج کے بعد جتنی دیر سے طبی امداد ملتی ہے، موت کا خطرہ اتنا ہی بڑھ جاتا ہے۔

9۔ دماغی امراض سے تحفظ

شادی شدہ مرد اور خواتین میں متعدد دماغی امراض کا خطرہ کم ہوتا ہے۔ ایک امریکی تحقیق کے مطابق شادی شدہ جوڑے کے اندر ڈپریشن کی شرح کم ہوتی ہے اور دیگر نفسیاتی عوارض لاحق ہونے کا خطرہ کنوارے افراد یا مطلقہ افراد کے مقابلے میں نمایاں حد تک کم ہوتا ہے۔

تحقیق کے مطابق طویل المعیاد تعلق ان ہارمونز میں تبدیلی لاتا ہے جو تناؤ کا باعث بنتے ہیں۔ محققین کے مطابق اگرچہ شادی کے بعد کی زندگی تناؤ سے بھرپور ہوتی ہے مگر شادی شدہ افراد کے لیے اپنی زندگیوں کے دیگر مسائل پر قابو پانا کافی حد تک آسان ہوتا ہے۔

شادی کے فوائد مردوں کے لیے

شادی کے بعد مرد کو یہ فائدہ ہوتا ہے کہ وہ جس بھی لڑکی سے بات کرئے گا تو وہ اس کو شادی شدہ سمجھتے ہوئے بڑے ہی خلوص اور مہذب انداز میں جواب دے گئی۔ جبکہ اگر یہی کوشش کوئی کنورہ کرئے گا تو وہ لڑکی فوراً اس کی ماں بہن تک پہنچ جائے گا، یا بات جوتے اور تھپڑ تک بھی پہنچ سکتی ہے۔

شادی شدہ بندہ جس مرضی گھر کے باہر کھڑا ہو کوئی کچھ نہیں کہتا، جبکہ کنوارہ جس گلی میں کھڑا ہو لوگ شک کی نظر سے دیکھنے لگتے ہیں۔

شادی شدہ بندہ جب گھر سے نکلتا ہے تو لوگ سمجھتے ہیں کہ کسی کام سے جا رہا ہے جبکہ کنوارہ جب گھر سے نکلتا ہے تو لوگ دیکھ کر کہتے ہیں کسی لڑکی کے چکر میں کہیں جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: قوت باہ کیا ہے؟ مردانہ قوت باہ میں اضافہ کرنے کے قدرتی طریقے

کنواروں کو اپنے کپڑے خود دھونا پڑتے ہیں،استری خود کرنا پڑتی ہے اور دیگر کام بھی خود سرانجام دینا ہوتے ہیں۔ جبکہ شادی شدہ مردوں کے شادی کے بعد ان سب کاموں سے جان چھوٹ جاتی ہے۔

شادی شدہ افراد کو کمرہ بند کر کے کال کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی اور نہ ہی رات کو دیر سے گھر آنے پر بہانے بنانے کی ضرورت پڑتی ہے۔

شادی کے فوائد عورتوں کے لیے

شادی کے بعد عورت کو یہ فائدہ ہوتا ہے کہ وہ جس لڑکے سے بھی بات کرئے گی وہ اسے بڑے ہی مہذب انداز میں جواب دے گا اور اکثر اپنی بہن سمجھے گا۔ جبکہ غیر شادی شدہ لڑکی اگر کسی بندے سے کوئی بات کرئے گی تو وہ بندہ جواب دینے کے بجائے پہلے تو اسے سر سے پاؤں تک نہارے گا، پھر بڑی ہی گندی مسکراہٹ سے جواب دے گا، اور ساتھ یہ کوشش بھی کرئے کہ کس طرح یہ لڑکی پٹ جائے۔

کنواری لڑکی کو گھر سے باہر نکلنے کے لیے ماں باپ اور بھائیوں سے اجازت لینی پڑتی ہے۔ جبکہ شادی شدہ عورتیں صرف اطلاع دیتی ہیں کہ میں فلاں کام سے جارہی ہوں۔

شادی شدہ لڑکی محلے میں کسی بندے سے بات کر سکتی ہے لیکن کنوارہ لڑکی اگر کسی سے بات کرئے تو لوگ اس کو اسی بندے سے منسوب کر دیتے ہیں۔

شادی کے فوائد سے متعلقہ اگر کوئی چیز آپ کی سمجھ میں نہیں آئی ہے یا آپ اس تحریر کے حوالہ سے مزید معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں تو آپ ہمیں کمنٹس کر سکتے ہیں۔ آپ کے ہر سوال،ہر کمنٹس کا جواب دیا جائے گا۔

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ اسے سوشل میڈیا پر شیئر کر سکتے ہیں۔ تاکہ آپ کے دوست احباب کی بھی بہتر طور پر راہنمائی ہو سکے۔

یہاں سے شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے